اپنی نگاہیں آسمان پر جمائے رکھیں، رات کو ایک شاندار فلکیاتی نظارہ دیکھا جائے گا‘

1,857

مُملکت میں مبصرین 12 اگست بروز جمعہ آدھی رات سے اور 13 اگست بروز ہفتہ طلوع آفتاب سے چند گھنٹے پہلے کے دوران ایک شہاب ثاقب کی آمد آمد ہے۔ یہ ایک منفرد فلکیاتی منظر ہوگا جسے عام آنکھ سے دیکھا جا سکے گا۔ عرب دنیا میں یہ ایک منفرد فلکیاتی منظر سمجھا جاتا ہے۔

سعودی عرب کے علاقے جدہ میں فلکیاتی سوسائٹی کے سربراہ انجینیر ماجد ابو زاھرہ نے "العربیہ ڈاٹ نیٹ” کو بتایا کہ ’پرسیڈ شہاب ثاقب‘ ہر سال رات کے آسمان میں ایک شاندارمنظرپیش کرتے ہیں، لیکن اس سال کی خاص بات یہ ہے کہ رات کو چاند بھی پوری طرح روشن اور موجود ہوگا۔ تقریباً مکمل طور پر روشن ہوگا۔ یہ منظرآدھی رات کے ایک گھنٹے بعد 10 سے 20 شہابیوں کے درمیان دیکھنے کا موقع ہے، لیکن دیکھے گئے شہاب ثاقب کی اصل تعداد کو فیلڈ مانیٹرنگ پر چھوڑ دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وہ توقع کرتے ہیں کہ مکہ مکرمہ وقت کے مطابق صبح 04 بجے پرسیڈز اپنے عروج کو پہنچ جائیں گے، کیونکہ وہ شمال مشرقی افق سے روانہ ہوں گے۔ البتہ زیادہ تاریک مقام پر ان کا نظارہ زیادہ واضح ہوگا، جتنے زیادہ ستارے دیکھے جاسکتے ہیں، اتنے ہی زیادہ یہ شہاب ثاقب دیکھے جاسکتے ہیں۔ اس بات سے کوئی فرق نہیں پڑتا ہے کہ آسمان کے تمام حصوں میں پرسیڈز کو کسی بھی وقت دیکھا جاسکتا ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ ان شہابیوں کو دیکھنا مزے کی بات ہے لیکن یہ کم از کم ایک گھنٹے کی مخصوص وقت کی حد میں مشاہدہ کیے جانے والے شہابیوں کی تعداد کا حساب لگا کر مفید سائنسی ڈیٹا بھی بنا سکتا ہے۔مبصر 10 منٹ تک آسمان کا مشاہدہ کر سکتا ہے اور کوئی بھی سرگرمی نہیں دیکھ سکتا ہے۔ صرف چند منٹوں کے بعد کئی شہابیے تقریباً بیک وقت نمودار ہو سکتے ہیں۔

انہوں نے کہا کہ پرسیڈس کے دوران دیگر کمزور شہابیے فعال ہوتے ہیں اور ساتھ ہی بہت سے بے ترتیب ستارے بھی ہوتے ہیں جو ہر گھنٹے میں ہوتے ہیں۔

پرسیڈس مشتری یا زہرہ کی طرح بہت روشنی (آگ کے گولے) پیدا کرنے کے لیے بھی مشہور ہیں اور کوئی دوسرا دومکیت اتنا پیدا نہیں کرتا جتنا کہ Comet Swift-Total کرتا ہے – شاید اس کے بڑے نیوکلئس کے نتیجے میں اس کی روشنی زیادہ ہے جس کا قطر 26 کلومیٹر ہے۔ ایک سروے سے پتہ چلتا ہے کہ یہ شہابیے بڑے ٹکڑوں میں تبدیل ہو گئے ہیں۔ حالیہ پانچ سال کی مدت میں بتایا گیا ہے کہ پرسیڈس میں کسی بھی دوسرے الکا شاور سے زیادہ آگ کے گولے ہوتے ہیں۔