امریکہ اور افغان طالبان کے درمیان معاہدے پر سعودی عرب کا موقف بھی آگیا

سعودی عرب نے امریکا اور افغان طالبان کے درمیان ہفتے کے روز طے پانے والے امن سمجھوتے کا خیرمقدم کیا ہے اور اس امید کا اظہار کیا ہے کہ اس سے جنگ زدہ افغانستان میں جامع اور مستقل جنگ بندی کی راہ ہموار ہو گی . العربیہ کے مطابق سعودی عرب کی وزارتِ خارجہ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ ”یہ سمجھوتاافغانستان میں امن واستحکام کی بحالی کے لیے اہم کردار کردار ادا کرے گا اور اس سے افغان شہریوں کو اپنے ملک کی ترقی میں کردار ادا کرنے میں مدد ملے گی .

“امریکا اور طالبان کے درمیان قطر کے دارالحکومت دوحہ میں افغانستان سے غیرملکی فوجیوں کے انخلا اور گذشتہ اٹھارہ سال سے جاری جنگ کے خاتمے کے لیے یہ تاریخی سمجھوتا طے پایا ہے. دونوں فریقوں کے نمایندوں نے دوحہ میں منعقدہ ایک تاریخی تقریب میں اس سمجھوتے پر دست خط کیے ہیں.اس سمجھوتے کے تحت امریکا افغانستان میں تعینات اپنے آٹھ ہزار چھے سو فوجیوں کو 135 روز میں واپس بلا لے گا. افغانستان میں اس وقت تیرہ ہزار امریکی فوجی تعینات ہیں.