العلا کی چٹانوں کا ثقافتی ورثہ جس کی تاریخ دور نبوت سے ملتی ہے

ریاض : سعودی عرب کی العلا گورنری کو مملکت میں اسلامی اور عرب تاریخی اور ثقافتی ورثے کا سب سے بڑا شہر قرار دیا جاتا ہے۔ العلا گورنری اوراس کے مضافات آثار قدیمہ کے نوشتہ جات، راک آرٹ، اور اسلامی نقوش اور تحریروں کی ایک بڑی تعداد سے مالا مال ہیں جو پتھرپر کندہ کی گئی ہیں۔اس سلسلے میں نوادرات اور ورثہ کے محقق اور فوٹوگرافرعبد الالہ الفارس نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ مؤرخین کی کتابوں میں العلا گورنری میں بعض اسلامی کتب کے متعدد حوالے موجود ہیں۔ انہوں نے نشاندہی کی کہ یہ مقام تبوک شہر کے جنوب میں البریکہ میں وادی المطلع کے قریب العلا کے شمال میں پہاڑوں میں سے ایک میں ہے جہاں شمال مشرق سے پہاڑ کی چٹانی پہلو پراسلامی تحریریں پھیلی ہوئی ہیں۔ جنوبی اور مغربی اطراف کی چٹانوں پر تصاویر، اسلامی تحریریں اور نوشتہ جات موجود ہیں۔