اسکولی نصاب میں ساورکر کی تعریف میں مبالغہ آرائی

229

بنگلورو: کرناٹک میں بی جے پی حکومت کی طرف سے ہندوتوا کے نظریہ ساز ونائک دامودر ساورکر کو اسکول کی نصابی کتابوں میں مبالغہ آرائی کرتے ہوئے ساورکر کو بڑھا چڑھا کر پیش کرنے پر بحث شروع ہوگئی ہے اب یہ بات سامنے آئی ہے کہ روہت چکرتھرتھ کی سربراہی والی نصابی کتاب کے ذریعہ نظرثانی شدہ ہائی اسکول کے نصاب میں ان پر ایک سبق شامل کیا گیا ہے اس سے پہلے، راشٹریہ سویم سیوک سنگھ کے بانی کیشو بلیرام ہیڈگیوار کی تقریر کا اندراج متنازعہ ہو گیا تھا۔

شیموگہ میں ساورکر کے فلیکس ہٹائے جانے پر تشدد اور ونائک چترتھی کے دوران بھگوان گنیش کی مورتیوں کے ساتھ ان کی تصویر لگانے کی مخالفت کے بعداب سوشل میڈیا پر اسکول کی نصابی کتابوں میں ساورکر کو بڑھا چڑھا کر پیش کرنے پر بحث چھڑ گئی ہے۔اس کے ساتھ ہی ریاست میں نصابی کتابوں پر نظرثانی کا سلسلہ پھر سے سر اٹھانے لگا ہے۔ محکمہ تعلیم نے آٹھویں جماعت کے لیے کنڑ کی نصابی کتاب سے ایک سبق بدل دیا ہے۔پچھلا سبق ’’بلڈ گروپ‘‘جو وجئے مالا کی طرف سے لکھا گیا تھا،گٹی کے ’’کالوانو گیداوارو‘‘ (وقت کے خلاف جیتنے والے) سبق سے بدل دیا گیا ہے۔ یہ سبق مصنف کے انڈمان سیلولر جیل کے دورے کا پہلا شخصی بیان ہے جہاں ساورکر کو رکھا گیا تھا۔

وی ڈی ساورکر پر 8ویں جماعت کی کنڑ (دوسری زبان) کی نصابی کتاب کا ایک پیراگراف سوشل میڈیا پر وائرل ہوا ہے۔’’ساورکر وطن جایا کرتے تھے اور جیل واپس بلبل پرندے کے پروں پر بیٹھا کرتے تھے جو ان کے انڈمان جیل میں داخل ہوتا تھا جس میں کھڑکیاں بھی نہیں تھیں۔‘‘ مبینہ طور پر آٹھویں جماعت کی نصابی کتاب کے ’کالوانو گیداوارو‘ نامی اسباق کی تصاویر سوشل میڈیا پر وائرل ہو رہی ہیں۔مصنف نے ساورکر کے جیل(سیل) کی بھی تصویر کشی کی ہے اور بتایا ہے کہ مصنف، ایک پیراگراف میں کہتا ہے، ’’جس کوٹھڑی میں ساورکر کو قید کیا گیا تھا وہاں ایک کلیدی سوراخ بھی نہیں تھا۔ لیکن بلبل پرندے کمرے میں آتے تھے اور ساورکر اپنے پروں پر بیٹھ کر باہر اڑتے تھے اور ہر روز مادر وطن کو جاتے تھے۔